لاہور ۔ 20 مئی (اے پی پی) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کی سلیکشن کمیٹی کے چیئرمین و چیف سلیکٹر انضمام الحق نے ورلڈکپ 2019ء کیلئے پندرہ رکنی قومی سکواڈ کا اعلان کر دیا، سرفراز احمد ٹیم کی کپتانی کریں گے ۔ قذافی سٹیڈیم لاہور میں ڈائریکٹر میڈیا سمیع الحسن برنی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انضمام الحق نے بتایا کہ 23 مئی تک ہر ٹیم ورلڈ کپ کے سکواڈ میں تبدیلی کرسکتی ہے اور اسی سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ہم نے پہلے (18اپریل) سے اعلان کردہ اپنے پندرہ رکنی ورلڈ کپ کے سکواڈ میں انگلینڈ کی کنڈیشزکو مد نظر رکھتے ہوئے چار تبدیلیاں کی ہیں جس کے مطابق فہیم اشرف، جنید خان، یاسر شاہ اور عابد علی کو ڈارپ کیا ہے جبکہ محمد عامر، وہاب ریاض، شاداب خان اور آصف علی کی ٹیم میں واپسی ہوئی ہے۔ محمد عامر کو جنید خان کی جگہ، وہاب ریاض کو فہیم اشرف کی جگہ، شاداب ریاض کو یاسر شاہ اور آصف علی کو عابد علی کی جگہ ٹیم میں شامل کیا گیا ہے ۔ اعلان کردہ پندرہ رکنی سکواڈ میں دو اوپنرز، فخر زمان، امام الحق، چھ مڈل آرڈر بلے باز آصف علی، بابر اعظم، حارث سہیل، محمد حفیظ، کپتان سرفراز احمد، شعیب ملک، دو سپنرز عماد وسیم، شاداب خان اور پانچ فاسٹ بائولرز حسن علی، محمد عامر، محمد حسنین، شاہین شاہ آفریدی اور وہاب ریاض شامل ہیں۔ انضمام الحق نے بتایا کہ انگلینڈ میں چار ون ڈے میچز کے دوران کھلاڑیوں کی کارکردگی اور کنڈیشزکا بخوبی اندازہ ہوا ۔ ہماری بائولنگ میں تجربہ کی کمی ہے۔ فیلڈرز کی طرف سے کیچز چھوڑنے کی وجہ سے انگلینڈ کے خلاف میچز ہارے۔ انہوں نے کہاکہ انگلینڈ کی وکٹوں پر ریورس سوئنگ اور پرانے گیند سے بائولنگ کروانے والا تجربہ کار بائولر ہی کامیاب ہوگا اسلئے ٹیم میں وہاب ریاض اور محمد عامر کو شامل کیا گیا ہے۔ محمد عامر کو انگلینڈ کی وکٹوں پر بائولنگ کا وسیع تجربہ اور ان کا اکانومی ریٹ اچھا ہے۔ وہاب ریاض اچھی ریورس سوئنگ کرلیتے ہیں جبکہ پرانے گیند کا استعمال بھی اچھی طرح کرتے ہیں۔ اسی طرح شاداب ریاض بہترین سپنر ہے اور وہ 100 فیصد فٹ ہوگیا ہے جبکہ آصف علی نے انگلینڈ کے خلاف ون ڈے میچز میں اچھی بیٹنگ کا مظاہرہ کیا ہے اسلئے انہیں ٹیم کا حصہ بنایا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ عابد علی کو ٹیم سے باہر کرنا آسان نہیں تھا لیکن ہمارے پاس اچھے اوپنرز ہیں اور ہمیں نچلے نمبروں پر اچھا بلے باز چاہئے تھا جو کہ آصف علی کی شکل میں موجود ہے ۔ آصف علی کو پاور ہٹنگ کی وجہ سے عابد علی پر ترجیح دی گئی ہے۔ انگلینڈ کی پچز اور کنڈیشن میں چھٹے یا ساتویں نمبر پر ایسا کھلاڑی ضرور ہونا چاہیے جو رنز کرسکے۔ انہوں نے کہاکہ ٹیم کے بیک اپ کے طور پر محمد رضوان، عابد علی اور فہیم اشرف انگلینڈ میں ہی رہیں گے اور انجری کی صورت میں ٹیم کا حصہ بنیں گے۔ انضمام الحق نے کہاکہ انہوں نے یو ٹرن نہیں لیا بلکہ ہمارے پاس 23 مئی تک ورلڈ کپ سکواڈ میں تبدیلی کی آپشن تھی جس کا استعمال کیا۔ انضمام الحق نے کہاکہ پاکستان کی ٹیم ورلڈ کپ کی نمبر ون ٹیم ہوگی اور ٹرافی جیت کر وطن لوٹے گی ۔ انہوں نے کہا کہ ایک کرکٹرز کی حیثیت سے بھی کہا جاسکتا ہے کہ پاکستان کی ٹیم ورلڈ کپ جیتنے کی پوری صلاحیت رکھتی ہے ۔ انضمام الحق نے بتایا کہ کہ کوچنگ سٹاف اور میرا کنٹریکٹ ورلڈ کپ تک کا ہے۔