حکومت پنجاب سے گذارش ہے کہ وہ سپریم کورٹ فیصلے میں ابہام کو دور کرنے کے لئے نظر ثانی کی اپیل دائر کرے ، حافظ طاہر اشرفی

Hafiz Tahir Mahmood Ashrafi
Hafiz Tahir Mahmood Ashrafi

اسلام آباد۔22فروری (اے پی پی):وزیراعظم کے نمائندہ خصوصی برائے مذہبی ہم آہنگی حافظ محمدطاہر محمود اشرفی نے کہا ہے کہ کسی کو تحریف قرآن کی کی اجازت نہیں دی سکتی ، حکومت پنجاب سے گذارش ہے کہ وہ سپریم کورٹ میں6 فروری کو ہونے والے فیصلے میں ابہام کو دور کرنے کے لئے نظر ثانی کی اپیل دائر کرے یا سپریم کورٹ کی طرف سے اس کی وضاحت کردی جائے، ختم نبوت ہر مسلمان کا معاملہ ہے ، ہر مسلمان حضورؐ سے محبت رکھتا ہے ۔وہ جمعرات کو نگران وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مرتضی سولنگی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے ۔

طاہر اشرفی نے کہا کہ 6 فروری کو سپر یم کورٹ کا ایک فیصلہ آیا تھا اس حوالےسے وکلا ، علماء ، مشائخ سے رابطہ تھا ، عقیدہ ختم نبوت ہر مسلمان کا معاملہ ہے ، کچھ لوگوں نے یہ معاملہ بھی سیاست کے طور پر استعمال کرنے کی کوشش کی ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت پنجاب سے بھی گذارش ہے کہ ابہامات کو دور کرنے کے لئے سپریم کورٹ میں نظر ثانی اپیل دائر کردے تا کہ انتشار پھیلانے والے کامیاب نہ ہوسکیں ۔ ہم کسی کو بھی اجازت نہیں دے سکتے وہ حضورؐ یا مقدسات کا نام لیکر انتشار پھیلانے کی کوشش کرے ۔

پاکستان مختلف مذاہب اور مسالک کے ماننے والوں کا ملک ہے ،پاکستان کا آئین، قانون ، قرآن و سنت کے تابع ہیں، پاکستان کے اندر رہنے والوں کی مذہبی آزاد ی ،آئین نے طے کر دی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ قانونی معاملہ ہے ، متعلقہ وکلا اور لوگ ہم سے رابطے میں ہیں ، تمام امور عدالتوں کے اندر جائیں گے ، اس پر سیاست سب سے بڑا جرم ہے ۔ حافظ طاہر اشرفی نے کہا کہ ہماری سپریم کورٹ سے اپیل ہے کہ اس حوالے سے ابہام یا الفاظ کا معاملہ ہے تو اس کی وضاحت ہوجائے، حکومت پنجاب اس حوالے سے ریویو فائل کرے ۔

انہوں نے کہا کہ ختم نبوت کا غلام ہونے کے ناطے اپیل ہے کہ امن و استحکام کو سامنے رکھ کر ہر ایسی کوشش جس سے انتشار پھیلے اسے مل کر ناکام بنائیں ۔ انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا پر گالم گلوچ کی جارہی ہے، ان سے گذارش ہے کہ وہ پاکستان کے آئین و قانون میں متفقہ فیصلوں کے حوالے سے پراپیگنڈہ نہ کریں ۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے اندرسب لوگ قرآن ، حضورؐ اور وطن سے محبت کرنے والے ہیں ۔