پاکستان برطانیہ کا اہم اقتصادی اور تجارتی شراکت دار ہے ،پاک برطانیہ تجارتی حجم 2025 تک دوگنا ہو جائے گا، برطانوی ہائی کمشنر

پاکستان برطانیہ کا اہم اقتصادی اور تجارتی شراکت دار ہے ،پاک برطانیہ تجارتی حجم 2025 تک دوگنا ہو جائے گا، برطانوی ہائی کمشنر

اسلام آباد۔12جون (اے پی پی):پاکستان میں برطانوی ہائی کمشنر ڈاکٹر کرسچن ٹرنر نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ دو طرفہ تجارت 2025 تک دوگنی ہو جائے گی اور اس سلسلے میں دونوں حکومتوں کے درمیان اتفاق رائے ہونے جا رہا ہے۔ اتوار کو ملکہ الزبتھ دوئم کی سالگرہ کی تقریب میں اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ برطانیہ، پاکستان کا تیسرا سب سے بڑا عالمی تجارتی شراکت دار ہے، گزشتہ مالی سال کے اختتام پر پاکستان کی برآمدات 2.1 بلین ڈالر تک پہنچ گئی ہیں۔

برطانوی ہائی کمشنر نے کہا کہ پاکستان برطانیہ کا اہم اقتصادی اور تجارتی شراکت دار ہے اور دونوں ممالک کے درمیان دہائیوں پرانے تعلقات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں برطانوی سفارتخانہ ہمیشہ ویزوں اور دیگر امیگریشن مسائل میں سہولت فراہم کرتا رہا ہے اور گزشتہ سال برطانیہ نے پاکستانیوں کو ریکارڈ تعداد میں ویزے جاری کئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ویزے کے عمل کو کاروباری برادری اور لوگوں کے لیے آسان بنایا جا رہا ہے جس سے دوطرفہ اقتصادی روابط اور عوام سے عوام کے روابط میں اضافہ ہوگا۔ ڈاکٹر کرسچن ٹرنر نے کہا کہ دونوں ملکوں کے درمیاں سفارتی اور اقتصادی تعلقات 74 سال پر محیط ہیں جو ہر گزرتے سال کے ساتھ مزید مضبوط اور نتیجہ خیز ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ میں مقیم 1.6 ملین پاکستانی تارکین وطن دونوں ممالک کے عوام کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے کا بڑا ذریعہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ برطانیہ میں مقیم پاکستانی دونوں ممالک کی اقتصادی، تجارتی، سفارتی اور سماجی سرگرمیوں میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔ ہائی کمشنر نے کہا کہ پاکستان میں 100,000 کے قریب برطانوی شہری مقیم ہیں جن کا تعلق تجارت سمیت مختلف شعبوں سے ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی کل آبادی کا 50 فیصد سے زائد نوجوانوں پر مشتمل ہے جو کہ دنیا میں غیر معمولی ہے، نوجوان آبادی کی اتنی بڑی تعداد پاکستان کے لیے بہت زیادہ صلاحیت رکھتی ہے جو مستقبل میں مقامی معیشت میں اہم کردار ادا کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ برطانیہ نوجوانوں کے حوالے سے تعلیم اور دیگر شعبوں میں پاکستان کے ساتھ مکمل تعاون کرے گا۔ ہائی کمشنر نے کہا کہ تعلیم یافتہ اور ہنر مند نوجوان پاکستان کی معاشی ترقی اور پاک۔ برطانیہ تعلقات کو مضبوط بنانے میں اپنا متحرک کردار ادا کریں گے۔ ڈاکٹر کرسچن ٹرنر نے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان خوشگوار تاریخی اور ثقافتی تعلقات ہیں جو دن بدن مضبوط ہورہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملکہ برطانیہ الزبتھ دوئم نے دنیا کے کل 200 دورے کئے جن میں پاکستان کے دو تاریخی دورے شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملکہ برطانیہ اور شاہی خاندان پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتے ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ پاکستان اور برطانیہ کے تعلقات مزید مضبوط ہوں گے اور پاکستان دنیا میں ترقی اور امن کے لیے اپنا اہم کردار ادا کرے گا۔