کراچی کنگز اپنے دوسرے ایچ بی ایل پی ایس ایل ٹائٹل کی تلاش کا آغاز 18فروری سے کرے گی

PSL
PSL

کراچی۔ 15 فروری (اے پی پی):کراچی کنگز نئے کوچ اور کپتان کے ساتھ ایچ بی ایل پی ایس ایل میں پر اعتماد انداز کے ساتھ آغاز کرنے جارہی ہے جس میں وہ اپنے مقامی ٹیلنٹ کے ساتھ ساتھ عالمی سٹار پاور پر اعتماد کا اظہار کرے گی۔کراچی کنگز اپنی مہم کا آغاز 18فروری کو ملتان سلطانز کے خلاف ملتان کرکٹ سٹیڈیم میں کرے گی۔کراچی کنگز نے ویسٹ انڈیز کے سپر سٹار کیرون پولارڈ کو اپنی ٹیم میں شامل کیا ہے جو اپنی آل رائونڈ صلاحیتوں سے قسمت بدلنے کی کوشش کریں گے۔ کنگز نے آسٹریلیا کے آل رائونڈر ڈینیئل سامس کے ساتھ ساتھ تجربہ کار شعیب ملک کو بھی برقرار رکھا ہے۔ فاسٹ بائولنگ کے شعبے میں ڈومیسٹک کرکٹ کا وسیع تجربہ رکھنے والے میر حمزہ اور انور علی موجود ہیں۔

کراچی کنگز 2023کے سیزن میں صرف تین فتوحات حاصل کرنے میں کامیاب ہوئی تھی اور اپنی صفوں میں حیرت انگیز طاقت رکھنے کے باوجود وہ ایک یونٹ کے طور پر اکٹھے نہیں ہو سکے۔ ٹیم میں مقابلہ کرنے کا جذبہ شامل ہے اور وہ اس سیزن میں نئی جان ڈالنے اور کراچی کے شائقین کو خوش کرنے کے لیے بہت کچھ کرنے کا ارادہ رکھے ہوئے ہے۔ 2020کے ایچ بی ایل پی ایس ایل چیمپئنز جلد ہی میدان میں اترنے کے لیے پرعزم ہیں کیونکہ انتہائی تجربہ کار شعیب ملک اپنے کریئر کے اہم موڑ پر ایکشن میں نظر آئیں گے۔فل سمنز کوچنگ کے وسیع تجربے سے مالا مال ہیں۔ انہوں نے ویسٹ انڈیز کی کوچنگ کی اور اس وقت کیریبین پریمیئر لیگ (سی پی ایل)میں ٹرینباگو نائٹ رائیڈرز اور میجر لیگ کرکٹ (ایم ایل سی)میں ایل اے نائٹ رائیڈرز کے ہیڈ کوچ ہیں۔

کراچی کنگز کے مالک سلمان اقبال نے کہا ہے کہ فل سمنز کو بطور ہیڈ کوچ لانے کا فیصلہ ان کی متاثر کن کارکردگی کا نتیجہ ہے جس میں ٹی 20ورلڈ کپ جیتنے والا کوچ ہونا بھی شامل ہے۔ اعلی سطح پر ٹیموں کو کامیابی کے لیے رہنمائی کرنے کا ان کا تجربہ ہمارے کوچنگ سیٹ اپ میں ایک قابل قدر جہت کا اضافہ کرتا ہے اور ہم نویں ایڈیشن میں کامیاب مہم کے لیے ان کی مہارت کو بروئے کار لانے اور مستقبل کے لیے ایک ٹیم بنانے کے لیے پر امید ہیں۔سلمان اقبال نے ایچ بی ایل پی ایس ایل کی اہمیت اور پیش رفت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاکہ گزشتہ برسوں میں ہونے والی پیش رفت غیر معمولی رہی ہے

جس نے نہ صرف ٹی ٹونٹی کرکٹ کے معیار کو بلند کیا بلکہ پاکستانی ٹیلنٹ کی نشوونما میں بھی اہم کردار ادا کیا ہے۔ لیگ مقامی ٹیلنٹ کو نمایاں کرنے انہیں بین الاقوامی سطح پر سامنے لانے اور مواقع فراہم کرنے کا ایک اہم پلیٹ فارم بن گئی ہے۔اس سیزن میں کراچی کنگز کی قسمت کے بارے میں سلمان اقبال کا کہنا تھا کہ کراچی کنگز کے شائقین اس سال ایک بڑے تبدیلی کی توقع کر سکتے ہیں۔ متوازن سکواڈ ، تجربہ کار قیادت اور پرجوش کرکٹ پر توجہ کے ساتھ ہم اپنے امکانات کے بارے میں پر امید ہیں، ٹیم مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہے،

بنیادی مقصد ایسی متاثرکن کارکردگی پیش کرنا ہے جس پر ہمارے شائقین فخر محسوس کرسکیں۔کنگز نے شان مسعود کو اپنا کپتان برقرار رکھا ہے جو اس وقت پاکستانی ٹیسٹ ٹیم کی قیادت کر رہے ہیں۔ کراچی کنگز کے ڈائریکٹر حیدر اظہرنے اس فیصلے پرکہا ہے کہ شان مسعود کو کراچی کنگز کے لیے حاصل کرنا ہمارے لیے بہت ضروری تھا۔

ان کی قائدانہ خصوصیات اور کپتانی کے کارنامے سب کے سامنے ہیں اور ہمیں فخر ہے کہ کراچی کے ایک مقامی لڑکے کو ٹیم کی قیادت کی ذمہ داری سونپی گئی ہے۔ ذاتی طور پر ماضی میں شان کے ساتھ قریب سے کام کرنے کے بعد مجھے یقین ہے کہ وہ ہماری ٹیم کے لیے مثالی کپتان ثابت ہوں گے اور ہم توقع کرتے ہیں کہ وہ ہمارے پروجیکٹ میں مرکزی کردار ادا کریں گے۔