اسلام آباد ۔ 16 جون(اے پی پی) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات و قومی ورثہ سینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ عمران خان ملک میں مارشل لاءنہیں لگوانا چاہتے، ماضی کے تجربات کو سامنے رکھتے ہوئے وہ کوئی بھی ایسی مہم نہیں چلائیں گے جس سے نظام کو زد پہنچے ، طاہر القادری ایک دن کا مجمع لگائیں گے اور لوگوں کو نئے سبز باغ دکھانے کی کوشش کریں گے، مشرقی روایات میں شامل ہے کہ بڑوں کو احتراماً جھک کر سلام کیا جاتا ہے، لگتا ہے کہ شاہ صاحب کو ملنے والی عزت پر بلاول خوش نہیں ہوئے‘ وزیراعظم محمد نواز شریف عید سے پہلے وطن واپس آجائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایک نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔سینیٹر پرویز رشید نے سید خورشید شاہ سے جھک کر ملنے کے حوالے سے سوال کے جواب میں کہا کہ بڑوں کو ملتے وقت گھٹنوں کو چھونا احترام کی نشانی ہوتی ہے، مشرقی روایات میں شامل ہے کہ بڑوں کو احتراماً جھک کر سلام کیا جاتا ہے، بلاول بھٹو ابھی ناسمجھ ہیں، لگتا ہے کہ شاہ صاحب کو ملنے والی عزت پر بلاول خوش نہیں ہوئے۔طاہر القادری کے دھرنے کے حوالے سے انہوں نے کہاکہ طاہر القادری کے پاس عقیدت مندوں کا ایک گروہ ہے جو ان کی عقیدت کی زنجیروں میں بندھا ہوا ہے۔ طاہر القادری دھرنوں میں کرائے پر بھی کچھ لوگ لے آتے ہیں اور کئی لوگ ڈیلی ویجز پر بھی بھرتی کرکے دھرنوں میں شامل کیے جاتے ہیں‘ 2014ءکے دھرنوں میں بھی ایسا ہی کچھ ہوا تھا جس کی اخبارات میں بھی خبریں شایع ہوئی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ ان کی باتیں 2013ء کے انتخاب سے پہلے کی سن رہے ہیں اس بار ان کی اچھی بات یہ ہے کہ وہ طویل دھرنا نہیں دینا چاہتے بلکہ وہ ایک دن کا مجمع لگائیںگے جو افطاری سے لے کر سحری تک ہوگا، میں سمجھتا ہوں کہ وہ اس بار لوگوں کو اپنی طرف متوجہ نہیں کرسکیں گے، وہ اس بار بھی لوگوں کو نئے سبز باغ دکھانے کی کوشش کریں گے۔وفاقی وزیر نے کہا کہ عمران خان بھی اس بار اپنا احتجاج ریکارڈ کرائیں گے، ان کے احتجاج کا مقصد حکومت گرانا نہیں ہے کیونکہ ان کا احتجاجی دھرنا غیرمعینہ مدت کیلئے نہیں ہوگا۔