سندھ طاس معاہدہ کو57سال بعد ہندوستان کے رویئے سے خطرات اورخدشات لاحق ہیں‘ امریکہ اس معاہدہ پر اثر انداز ہونے کی کوشش کررہا ہے وزیر خارجہ خواجہ محمد آصف کی کھلی کچہری کے بعد میڈیا سے بات چیت

APP32-06 SIALKOT: August 06 – Federal Minister for Foreign Affairs Khawaja Muhammad Asif talking to media persons at PML-N House. APP Photo by Muhammad Munir Butt

سیالکوٹ ۔06اگست(اے پی پی)وزیر خارجہ خواجہ محمد آصف نے کہاہے کہ سندھ طاس معاہدہ کو57سال بعد ہندوستان کے رویئے سے خطرات اورخدشات لاحق ہیں اور امریکہ اس معاہدہ پر اثر انداز ہونے کی کوشش کررہا ہے‘ گذشتہ6ماہ سے مذاکرات تعطل کا شکار رہے‘ 28جولائی کو میٹنگ میں پیش رفت ہوئی ہے اور ستمبر میں مذاکرات کے اگلے راونڈ کا آغاز ہوگا‘ فریقین کی یہ خواہش ہے کہ انڈس واٹر ٹریٹی برقرار رہے ۔ یہ بات انہوں نے مسلم لیگ ہاوس میں کھلی کچہری کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہی۔صوبائی وزیر بلدیات محمد منشاءاللہ بٹ ، رکن صوبائی اسمبلی چودھری محمداکرام، ضلعی جنرل سیکرٹری پی ایم ایل این سید شجاعت علی پاشا، قائمقام میئر چودھری بشیر احمداور شیخ ناصر کے علاوہ مسلم لیگی عہدیداران اور کارکنان کثیر تعداد میں موجود تھے۔وفاقی وزیر خارجہ خواجہ محمد آصف نے کہاکہ کشن گنگا کا معاہدہ 2سال قبل ہوگیا تھا مذاکرات میں تعطل کے دوران ہندوستان نے کشن گنگا میں فلنگ کرلی جس پر پاکستان نے شدید احتجاج کیا اور عالمی بینک کو اپنے تحفظات اور خدشات سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان رتلے کے مقام پر آبی ذخائر بنانے کا منصوبہ کی فزیبلٹی تیار کررہا ہے جس کے ڈیزائن اور منصوبے پر پاکستان نے 3اعتراضات اٹھائے ہیں‘ پاکستان اس منصوبے کو وزٹ اور انسپکشن کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے ۔ انہوں کہا کہ بات چیت کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے اور عالمی بینک اس سلسلہ میں موثر کردار ادا کرے گا۔