APP01-17 ISLAMABAD: October 17 - Federal Minister for Petroleum Ghulam Sarwar Khan addressing during Energy Forum-2018 at OGDCL Auditorium OGDCL House. APP photo by Saleem Rana

اسلام آباد ۔ 17 اکتوبر (اے پی پی) وفاقی وزیر پٹرولیم و قدرتی وسائل غلام سرور خان نے کہا ہے کہ پاکستان کا پٹرولیم مصنوعات اور گیس کا درآمدی بل بہت بڑھ گیا ہے، گردشی قرضہ 1200 ارب روپے سے زائد ہے، گیس کمپنیاں 150 ارب روپے کے خسارے میں ہیں، پچھلے 5 سالوں کے دوران کوئی نئے ذخائر دریافت نہیں ہوئے، موسم سرما میں گیس کی قلت ہو گی، توانائی کے بحران پر قابو پانے کے لئے مختصر، درمیانے اور طویل المدتی اقدامات کئے جائیںگے۔ بدھ کو یہاں انرجی فورم 2018ءکے افتتاحی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ہمیں آگے سمت کا تعین کرنا ہے، 60 کی دہائی میں بھارت کے ساتھ سندھ طاس معاہدہ کیا گیا ہے، تین ڈیم بھارت اور تین ہمارے حصے میں آئے۔ تربیلا اور منگلا ڈیم جیسے بڑے منصوبے اسی عشرے میں مکمل ہو ئے لیکن بعد میں کوئی نیا ڈیم نہیں بن سکا۔ کالا باغ ڈیم کو بھی سیاسی رنگ دے دیاگیا اور اس پر سیاست ہاوی ہو گئی۔ انہوں نے کہاکہ توانائی کے بحران کی وجہ سے ہماری صنعتوں پر بھی دباﺅ بڑھا ہے۔ نیلم جہلم منصوبے کا ابتدائی تخمینہ 80 ارب روپے تھے، 10 سالوں میں اسے مکمل کیا جانا تھا لیکن یہ 20 سالوں میں 500 ارب روپے سے مکمل ہوا ہے۔