اسلام آباد ۔ 14 اگست (اے پی پی)انسانی حقوق کی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے بھارت پر زور دیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں کیے گئے اقدامات فوری طور پر واپس لیے جائیں۔ ہیومن رائٹس واچ نے کہا ہے کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خود مختاری ختم کرنے کے بعد سے اب تک کشمیری لاک ڈاو¿ن کی حالت میں زندگی بسر کر رہے ہیں۔ ہیومن رائٹس واچ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خود مختاری ختم کر کے اسے دو حصوں میں تقسیم کیے جانے کے بعد سے کشمیری عوام کو گھروں میں بند کر دیا گیا ہے اور کشمیری قیادت بھی نظر بند ہے۔ بیان کے مطابق مقبوضہ وادی میں انٹرنیٹ، ٹیلی فون بند ہیں اور عید پر کشمیری مسلمانوں کے لیے مساجد بھی بند رہیں اور ان حالات میں لوگوں کے اپنے اہل خانہ سے رابطے نہیں ہو رہے ہیں جب کہ طبی سہولیات بھی ناکافی ہیں۔ ہیومن رائٹس واچ کے مطابق، بعض صحافیوں نے وادی میں بڑے پیمانے پر جھڑپوں اور مظاہروں کی رپورٹ دی ہے۔