سرینگر ۔ 20 ستمبر (اے پی پی) مقبوضہ کشمیر میں لوگوں نے غیر قانونی بھارتی قبضے اور نریندر مودی کی سربراہی میں قائم فرقہ پرست بھارتی حکومت کی طرف سے مقبوضہ علاقے کی خصوصی حیثیت ختم کیے جانے کے خلاف وسطی، شمالی اور جنوبی علاقوں میں زبردست مظاہرے کیے۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق نماز جمعہ کے فوراً بعد لوگوں نے سرینگر، بانڈی پورہ، بارہمولہ ، کپواڑہ ، اسلام آباد، پلوامہ، کولگام ، شوپیاں اور دیگر علاقوں میںسڑکوں پر آکر مظاہرے کیے۔ انہوںنے آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف فلک شگاف نعرے لگائے۔ بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے کئی علاقو ں میں مظاہروں پر آنسوگیس کے گولے داغے اور پیلٹ چلائے۔ قابض انتظامیہ نے مظاہروں کو روکنے کیلئے سرینگر، کپواڑہ، ہندواڑہ، گاندر بل ، اسلام آباد میں پابندیاں عائد کر دی تھیں۔انتظامیہ نے سرینگر کی تاریخی جامع مسجد، درگاہ حضرت بل، دستگیر صاحب، چرار شریف اور جامع مسجد کشتواڑ میں لوگوں کو نماز جمعہ ادا نہیں کرنے دی۔دریں اثنا 47روز بھی مقبوضہ وادی کشمیر میں معمولات زندگی مفلوج رہے۔ لوگ مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے بھارتی حکومت کے اقدام کے خلاف عملی طور پر سول کرفیو نافذ کیے ہوئے ہیں۔ تمام بازار، کاروباری مراکز ، دکانیں او رتعلیمی ادارے بندرہے جبکہ سڑکوں پر ٹریفک کی آمد ورفت معطل تھی۔ سرکاری دفاتر میںملازمین کی حاضری کم رہی۔