اسلام آباد ۔ 11 ستمبر (اے پی پی) قومی احتساب بیور نیب کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال نے کہا ہے کہ نیب بڑے پیمانے پر عوام سے لوٹ مار،اختیارات کے ناجائز استعمال، منی لانڈرنگ ، سرکاری فنڈز میں خوردبرد،ہاﺅسنگ سوسائیٹیز/کوآپریٹو سوسائٹیزمیں میگا کرپشن کے وائٹ کالر کرائمز کو ترجیحی بنیادوں پر نمٹاتاہے۔ یہ بات انہوں نے نیب ہیڈکوارٹرز میں نیب کی مجموعی کارکردگی سے متعلق جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ نیب کی موجودہ انتظامیہ نے تفصیلی غوروخوض کے بعدمقدمات کو تیزی سے نمٹانے کےلئے موثر آپریشنل ٹیکنالوجی وضع کی ہے جو کہ شکایت کی جانچ پڑتال انکوائری انویسٹیگیشن اور متعلقہ احتساب عدالتوں میں مقدمات دائر کرنے پر مشتمل ہے جس کےلئے دس ماہ کا عرصہ مقرر کیا ہے انہوں نے کہا کہ نیب نے سینئر سپروائزری افسران کی اجتماعی دانش سے فائدہ اٹھانے کےلئے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا نظام وضع کیا ہے جو کہ ڈائریکٹر ایڈیشنل ڈائریکٹر انویسٹیگیشن افسرز اور سیئنر لیگل قونصل پر مشتمل ہوتی ہے جس سے نہ صرف نیب کی کارکردگی میں بہتری آئی ہے بلکہ کوئی بھی فرد نیب کی تحقیقات پر اثر انداز نہیں ہوسکتا ۔