وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز کا ریڈیو پاکستان کے زیر اہتمام تقریب سے خطاب

اسلام آباد ۔ 13 اگست (اے پی پی) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا ہے کہ قیام پاکستان کا جس ٹرانسمیٹر سے ریڈیو پاکستان نے اعلان کیا اس ٹرانسمیٹر کی بحالی سے بڑھ کر ریڈیو پاکستان آج کے دن کی مناسبت سے بہتر کوئی تحفہ نہیں دے سکتا، ہماری تاریخ ایک روشن اور قابل فخر تاریخ ہے، بدقسمتی سے قومی اثاثوں کی سرکاری سطح پر اس طرح قدر نہیں کی گئی جس طرح کرنی چاہیے تھی، اس تاریخی یادگار ٹرانسمیٹر جو مارکونی نے بنایا تھا، اسے اپنی اصل حالت میں بحال کرنے پر ریڈیو پاکستان کو مبارکباد پیش کرتا ہوں، ہمیں اپنے اثاثوں اور تاریخ کو محفوظ بنانے کی ضرورت ہے تاکہ ہم یہ اثاثے اپنی آئندہ نسلوں کو منتقل کر سکیں، ریڈیو پاکستان کو پرانی ٹیکنالوجی سے نئی ٹیکنالوجی پر منتقل کرنے کا مرحلہ وار منصوبہ بنا رہے ہیں تاکہ ریڈیو پاکستان کی محصور کن آواز کو اسی مقام پر واپس لایا جا سکے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کو ریڈیو پاکستان ہیڈ کوارٹر میں طلوع صبح آزادی کا اعلان کرنے والے پہلے ٹرانسمیٹر کو شوکیس کرنے کے افتتاح اور طلوع صبح آزادی کے حوالے سے ریڈیو پاکستان کے زیر اہتمام پروقار تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ یوم آزادی کی تقریبات کے سلسلے میں سینیٹر شبلی فراز نے نیشنل براڈ کاسٹنگ ہاو¿س اسلام آباد میں یاد گار مارکونی ٹرانسمیٹر کی نقاب کشائی کی۔یہ نایاب ٹرانسمیٹر 1937 میں مناواں لاہور میں نصب کیاگیاتھا جس پر 1947 ءمیں 13 اور 14 اگست کی درمیانی شب قیام پاکستان کا اعلان کیاگیا تھا۔وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات نے کہا کہ کسی بھی ملک کے لئے اس کی تاریخ اور ورثہ اہمیت کا حامل ہوتا ہے، اپنی تاریخ اور ورثے کو محفوظ بنانے کے لئے ریڈیو پاکستان نے اہم کردار ادا کیا ہے اور تاریخی ٹرانسمیٹر کی بحالی پر سیکرٹری اطلاعات و نشریات اکبر حسین درانی اور ڈائریکٹر جنرل پاکستان براڈ کاسٹنگ کارپوریشن عنبرین جان کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات نے تاریخی ٹرانسمیٹر کو شوکیس کرنے کا افتتاح کرتے ہوئے اپنے تاثرات میں کہا کہ دنیا بھر میں جتنے بھی ممالک ہیں وہ اپنے تاریخی ورثے کی قدر کرتے ہیں، ہمیں بھی اپنے تاریخی ورثے کو محفوظ بنانے کے لئے اقدامات کرنے ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے تاریخ اور ادب کے اعتبار سے چیزیں سرد مہری کا شکار رہیں، ہماری یہ کوشش ہوگی کہ اس ٹرانسمیٹر، جس پر بہت محنت ہوئی ہے، کو محفوظ بنائیں۔ انہوں نے کہاکہ جو قوم اپنے تاریخی ورثے کا تحفظ نہیں کرتی، اپنی اقدار کو فراموش کردیتی ہے یا ورثے کو بھلا بیٹھی ہے وہ دنیا میں اعلیٰ مقام نہیں حاصل کرسکتی اور ریڈیوپاکستان واحد ادارہ ہے جو پاکستان اقدار اور ثقافت کی پاسداری کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس بات کی بھی خوشی ہے کہ وزارت اطلاعات و نشریات کا قلمدان سنبھالنے کے بعد ریڈیو ہیڈ کوارٹر کے دورہ کے موقع پر اس تاریخی ٹرانسمیٹر کو بحال کر کے ہیڈ کوارٹر منتقل کرنے کی ہدایت کی تھی اور آج اس کا افتتاح کر رہے ہیں۔ وفاقی سیکرٹری اطلاعات و نشریات اکبر حسین درانی اور ڈائریکٹر جنرل ریڈیو پاکستان عنبرین جان نے ٹرانسمیٹر کے حوالے سے وفاقی وزیر کو بریفنگ بھی دی۔ اس موقع پر وفاقی وزیر نے ”طلوع صبح آزادی“ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج 13 اگست کی رات ہم یہاں جمع ہیں، تاریخی ٹرانسمیٹر کو ریڈیو پاکستان کے صدر دفتر کا حصہ بنانے کے یادگار لمحات پر میں تمام شرکاءکو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ زیڈ اے بخاری آڈیٹوریم بھی ایک تاریخی آڈیٹوریم ہے، زیڈ اے بخاری ایک عہد ساز شخصیت اور میرے والد کے استاد تھے، اس لئے اس آڈیٹوریم میں آ کر ایک منفرد مسرت کا احساس ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریڈیو کا کردار پہلے سے زیادہ بہت اہم ہو گیا ہے، ایک پروگرام بنا رہے ہیں جس کے ذریعے تین مراحل میں ریڈیو کی پرانی ٹیکنالوجی کو نئی ٹیکنالوجی پر منتقل کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ 1947ءمیں جو ریڈیو کے ٹرانسمیٹر کی محصور کن آواز تھی، ہم ریڈیو کی اس آواز کو اسی مقام پر لانا چاہتے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں کم وسائل کے باوجود بھرپور کوششیں کر رہے ہیں تاکہ ہر شعبہ ترقی کر سکے۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ ریڈیو کی اہمیت پہلے سے اس لئے بھی بڑھ گئی ہے کہ ہم نے قومی سلامتی کے بیانیہ کو بیرونی دنیا تک بھی لے کر جانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسی تقریبات باقاعدگی سے منعقد ہونی چاہئیں اور ایسا لائحہ عمل بنانا چاہیے کہ ہر سال ریڈیو پاکستان اپنے تاریخی اثاثوں کو محفوظ بنا کر تقریبات کا انعقاد کرے۔ امید ہے کہ آئندہ بھی اسی جذبے کے ساتھ ریڈیو پاکستان آئیں گے، ریڈیو پاکستان کا ایک روشن مستقبل ہے، ہم اسے نئے افق پر لے کر جائیں گے۔ وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ اس مقد س سرزمین کے لوگ حب الوطنی کے جذبے سے سرشار اور پرعزم رہیں گے اور پاکستانی قوم اپنے محبوب وطن کی حفاظت کے لئے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی۔ 14 اگست کے پرمسرت دن کے موقع پرپوری پاکستانی قوم کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے وزیر اطلاعات نے یقین دلایاکہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت ملک کے استحکام‘ خوشحالی اور سلامتی کے لئے اپنی مخلصانہ کوششوں کو جاری رکھے گی۔ انہوں نے پاکستان کی ترقی اور مقبوضہ جموں و کشمیر کی آزادی کے لئے دعا بھی کی۔ تقریب میں وفاقی سیکرٹری اطلاعات و نشریات اکبر حسین درانی، منیجنگ ڈائریکٹر اے پی پی طارق محمود خان اور وزارت اطلاعات و نشریات اور اس کے ذیلی اداروں کے سینئر افسران بھی موجود تھے۔ قبل ازیں ڈائریکٹر جنرل پاکستان براڈ کاسٹنگ کارپوریشن عنبرین جان نے خطبہ استقبالیہ دیا اور شرکاءکو تاریخی ٹرانسمیٹر کے حوالے سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ وہ ٹرانسمیٹر ہے جس کے ذریعے ظہور آزر اور مصطفیٰ علی ہمدانی نے یکے بعد دیگرے انگریزی اور اردو زبان میں طلوع صبح آزادی کے ساتھ قیام پاکستان کا اعلان کیا۔ انہوں نے کہا کہ ریڈیو پاکستان اپنی وسعتوں کے ساتھ ارتقاءکے سفر پر گامزن ہے اور اس وقت ریڈیو پاکستان ملک کا سب سے بڑا نشریاتی ادارہ ہے۔ انہو ں نے کہا کہ 1947 ءکو یوم آزادی کے موقع پر ریڈیو پاکستان نے تین ٹرانسمیٹروں کے ساتھ اپنے سفر کا آغاز کیا اور آج ریڈیو پاکستان32AM اسٹیشنوں‘ 57FM اسٹیشنوں‘23 میڈیم ویو اور ایک شارٹ ویو ٹرانسمیٹر کے ساتھ ملک کا سب سے بڑا نشریاتی ادارہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا کا شعبہ بھی متحرک ہے جو حکومتی کامیابیوں پر مبنی نشریات کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کرتے ہوئے صارفین تک پہنچاتا ہے۔ عنبرین جان نے شرکاءکا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس تاریخی تقریب میں آپ کی شرکت ہمارے لئے باعث اعزاز ہے۔ اس موقع پر یوم آزادی کے حوالے سے موسیقی کی شام کا بھی انعقاد کیا گیا، جس میں صائمہ جہاں اور وائیلن نواز رئیس احمد سمیت معرو ف گلوکاروں اور موسیقاروں نے ملی نغمے پیش کرکے مادر وطن کے ہیروز کو خراج عقیدت پیش کیا۔