وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فرازسے چینی سفیر یائو جنگ کی الوداعی ملاقات، میڈیا اور ثقافت کے شعبوں میں تعاون کو مزید مستحکم کرنے پر اتفاق سی پیک میں زرعی شعبے کو شامل کرنے سے اس شعبے میں چینی مہارت سے فائدہ اٹھانے میں مدد ملے گی، لوگوں سے روابط بڑھانے اور ایک دوسرے کی اقدار اور روایات کو سمجھنے کے لئے ثقافتی سفارت کاری ضروری ہے، خیبر پختونخوا ، بلوچستان اور گلگت بلتستان میں ثقافتی پروگراموں کو خوب پذیرائی ملے گی، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز کی گفتگو

اسلام آباد ۔ 16 ستمبر (اے پی پی) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فرازسے چین کے سفیر یائو جنگ نے بدھ کو یہاں الوداعی ملاقات کی ، چینی سفیر نے کہا کہ پاکستان کی معیشت ترقی کی راہ پر گامزن اور سرمایہ کاری کے ماحول میں بہتری آئی ہے، پاکستان کو تیزی سے ابھرتا ہوا متسحکم اور خوشحال ملک دیکھ رہا ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ چین اور پاکستان کے مابین تعلقات قیادت کے ویژن کے مطابق آگے بڑھ رہے ہیں ۔ انہوں نے وزیراعظم عمران خان کے عوام کی فلاح و بہبود کو ترجیح دینے کے وژن کو بھی سراہا ۔دونوں شخصیات نے میڈیا اور ثقافت کے شعبوں میں تعاون کو مزید مستحکم کرنے پر اتفاق کیا۔ وفاقی وزیراطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ لوگوں سے روابط بڑھانے اور ایک دوسرے کی اقدار اور روایات کو سمجھنے کے لئے ثقافتی سفارت کاریضروری ہے۔ چینی سفیر نے وفاقی وزیر سینیٹر شبلی فراز کو آگاہ کیا کہ 2021 پاک چین تعلقات کی 70 ویں سالگرہ کا سال ہے، ثقافت اور میڈیا کے شعبے سے متعلق متعدد پروگرامات اورسرگرمیوں کا انعقاد اور تجربات کا تبادلہ کیا جائے گا۔ چینی سفیر نے کہا کہ ہماری خواہش ہے کہ ہمارے ثقافتی دستے پاکستان کے چھوٹے چھوٹے شہروں اور قبصوں کا دورہ کریں تا کہ عام لوگوں کو بھی چینی ثقافت سے لطف اندوز ہونے کا موقع مل سکے ۔ انہوں نے نوجوان صحافیوں کے لئے میڈیا ایکسچینج اور تربیتی پروگراموں کے حوالے سے بھی بات کی ۔ وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ خیبر پختونخوا ، بلوچستان اور گلگت بلتستان میں ہونے والے ثقافتی پروگراموں کو خوب پذیرائی ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ دیگر متعلقہ اداروں کے ساتھ ساتھ لوک ورثہ ، ثقافتی رسائی کو بڑھانے اور چینی ثقافتی دستوں کو سہولیات فراہم کرنے کے لئے ضروری ہم آہنگی بھی فراہم کرے گی۔ وفاقی وزیر سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ چین پاک اقتصادی راہداری(سی پیک) میں زرعی شعبے کو شامل کرنے سے اس شعبے میں چینی مہارت سے فائدہ اٹھانے میں مدد ملے گی اور کاشتکاری کے سائنسی طریقوں کو فروغ دے کر فصلوں کی پیداوار میں اضافے کے ساتھ ساتھ غذائی تحفظ میں بھی اضافہ ہوگا ۔چینی سفیر یاؤ جِنگ نے کہا کہ چین زراعت کے شعبے کی بہتری کے لئے ایک زرعی گروپ پاکستان بھیجے گا جو جائزہ لینے کے ساتھ ساتھ پاکستان میں کسانوں کو پیشہ ورانہ تربیت فراہم کرے گا۔ وزیر اطلاعات نے پاکستان میں چین کے سفیر کی حیثیت سے یائو جنگ کے کامیاب دور کی تعریف کی۔ انہوں نے دونوں ممالک کے عوام کے لئے باہمی فائدہ مند شعبوں میں دوطرفہ تعلقات کو مزید فروغ دینے میں ان کے کردار اور خدمات کو سراہا۔اس ملاقات میں وزارت خارجہ اور وزارت اطلاعات و نشریات کے سینئر حکام شریک تھے ۔