برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں کی ترسیلات زرمیں 71.54 فیصد اضافہ

اسلام آباد۔18اکتوبر (اے پی پی):برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں کی جانب سے ترسیلات زرملک بھجوانے کی شرح میں جاری مالی سال کے پہلے تین مہینوں میں 71.54 فیصدکا نمایاں اضافہ ریکارڈکیاگیاہے۔سٹیٹ بینک کی طرف سے جاری کردہ اعدادوشمارکے مطابق جولائی سے لیکرستمبر2020 تک کی مدت میں برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں نے 985.47 ملین ڈالرکازرمبادلہ ملک ارسال کیا جو گذشتہ مالی سال کے اسی عرصہ کے مقابلے میں 71.54 فیصد کم ہے، گذشتہ مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں نے 574.48 ملین ڈالرکازرمبادلہ ملک ارسال کیاتھا۔ستمبر2020 میں برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں نے289.29 ملین ڈالرزرمبادلہ ملک بجھوایا، گذشتہ سال ستمبرمیں برطانیہ میں مقیم پاکستانیوں نے176.90 ملین ڈالرکازرمبادلہ ملک ارسال کیا تھا۔موجودہ حکومت کی جانب سے منی لانڈرنگ کے خاتمے اورقانونی ذرائع سے بیرون ممالک سے رقومات کی منتقلی کیلئے اقدامات کے نتیجے میں سمندرپارمقیم پاکستانیوں کی جانب سے ترسیلات زرمیں گذشتہ مالی سالوں کے مقابلے میں نمایاں اضافہ دیکھنے میں آرہاہے۔ اگست 2018 میں حکومت سنبھالنے کے بعد پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے اقتصادی صورتحال کو بہتربنانے کیلئے جوپالیسی ترتیب دی اس میں منی لانڈرنگ کا خاتمہ، درآمدات میں کمی اوربرآمدات و ترسیلات زرمیں اضافہ پر خصوصی توجہ مرکوزکی گئی۔سٹیٹ بینک آف پاکستان کے اعدادوشمارکے مطابق رواں مالی سال کے دوران بیرون ممالک مقیم پاکستانیوں کی جانب ترسیلات زرمیں گزشتہ مالی سال کے مقابلے میں مجموعی طورپر31.08 فیصد اضافہ دیکھنے میں آیاہے۔