الیکشن کمیشن کے معاملے پر حکومت اور وزراء نے بہت محتاط رویہ رکھا، ہم شفاف الیکشن یقینی بنانا چاہتے ہیں، وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب

اسلام آباد۔14ستمبر (اے پی پی):وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن کے معاملے پر حکومت اور وزراء نے بہت محتاط رویہ رکھا، ہم الیکشن کمیشن کی مدد کر رہے ہیں اور شفاف الیکشن یقینی بنانا چاہتے ہیں، دنیا کے 20 سے زائد ممالک میں الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کا استعمال ہو رہا ہے، سپریم کورٹ بھی یہ فیصلہ دے چکی ہے کہ الیکشن کو صاف و شفاف بنانے کے لئے ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کو نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان ایک آئینی ادارہ ہے، آئینی اداروں کے سربراہان کی ذمہ داریوں کا تعین بھی آئین میں کیا گیا ہے، آئین کا آرٹیکل 218 کہتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے آزادانہ اور شفاف انتخابات کروانے ہیں، پاکستان کی تاریخ میں ہر الیکشن کے بعد دھاندلی کے الزامات لگائے جاتے ہیں اور الیکشن پر بے ضابطگیوں کے حوالے سے سوالات سامنے آنا شروع ہو جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن ایکٹ 2017ء کی شق 103 میں لکھا ہوا ہے کہ الیکٹرانک ووٹنگ سسٹم کے حوالے سے آزمائشی تجربات کروائے جائیں گے، الیکشن ایکٹ کی شق نمبر 94 میں لکھا ہے کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے کے حوالے سے تجربات کروائے جائیں گے، سپریم کورٹ بھی یہ فیصلہ دے چکی ہے کہ الیکشن کو صاف و شفاف بنانے کے لئے ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ الیکٹرانک ووٹنگ سسٹم کے حوالے سے پورے معاملے پر حکومتی اراکین، ممبران اور وزراء نے محتاط رویہ اختیار کیا اور الیکشن کمیشن کے ساتھ رابطے میں رہنے کے ساتھ ساتھ ان کے سوالات کے جوابات بھی دیئے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر مملکت فرخ حبیب نے کہا کہ الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی ٹیکنیکل کمیٹی کی میٹنگ میں وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز خود ان کو بریفنگ دے کر آئے، حکومت الیکشن کمیشن کے ساتھ بھرپور تعاون کر رہی ہے، ہم الیکشن کمیشن کو اس کی ذمہ داریاں پوری کرنے میں مدد فراہم کر رہے ہیں اور الیکشن کو صاف و شفاف بنانے کے لئے کام کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کے 20 سے زائد ممالک میں الیکٹرانک ووٹنگ مشینز کا استعمال ہو رہا ہے، امریکہ اور بھارت سمیت کئی ممالک میں الیکٹرانک ووٹنگ سسٹم استعمال کیا جا رہا ہے، الیکشن کمیشن نے 37 اعتراضات ٹیکنیکل کمیٹی کی میٹنگ سے پہلے حکومت کے سامنے رکھ دیئے جبکہ ان میں سے 27 اعتراضات الیکشن کمیشن کی اپنی استعداد کار سے متعلق ہیں۔