سی پیک پارلیمانی کمیٹی کا چیئرمین شیر علی ارباب کی قیادت میں فیڈمک کا دورہ، ترجیحی اکنامک زون کے منصوبہ پر بریفنگ لی

فیصل آباد ۔21اکتوبر (اے پی پی):چین پاکستان اقتصادی راہداری کے حوالے سے قائم کی گئی خصوصی پارلیمانی کمیٹی کے وفد نے کمیٹی کے چیئرمین شیر ارباب علی کی سربراہی میں فیصل آباد انڈسٹریل سٹیٹ ڈویلپمنٹ اینڈ مینجمنٹ کمپنی اور پاکستان کے پہلے ترجیحی اکنامک زون علامہ اقبال انڈسٹریل سٹی فیصل آباد کا دورہ کیا۔

وفد میں ممبر قومی اسمبلی و سابق سپیکر نیشنل اسمبلی سردار ایاز صادق اور ارکان قومی اسمبلی نفیسہ عنایت اللہ خٹک، زاہد اکرم درانی، نور عالم خاں اورصداقت علی عباسی بھی شریک تھے۔

پارلیمنٹری کمیٹی آن سی پیک نے فیڈمک و علامہ اقبال انڈسٹریل سٹی فیصل آباد کے مختلف حصوں کامعائنہ کیا اور سی ای او فیڈمک و علامہ اقبال انڈسٹریل سٹی فیصل آباد رانا یوسف سے مختلف جاری پراجیکٹس پر تفصیلی بریفنگ لی۔

اس موقع پرڈائریکٹر فیڈمک ضیاعلمدارحسین سائٹ ایڈمن فیڈمک رانا توصیف اور دیگر حکام بھی موجود تھے۔ بریفنگ کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چیئر مین پارلیمنٹری کمیٹی سی پیک شیر علی ارباب نے کہا کہ سپیشل اکنامک زون علامہ اقبال انڈسٹریل سٹی فیصل آباد میں بہت ہی اچھا کام ہو رہا ہے اوربھاری بیرونی سرمایہ کاری آرہی ہے جبکہ بڑی تعداد میں ملٹی نیشنل و نیشنل انویسٹرزیہاں سرمایہ کاری کررہے ہیں جنہیں وزیراعظم کی ہدایات کی روشنی میں وفاقی و صوبائی حکومتوں کی جانب سے تمام ممکن سہولیات و مراعات فراہم کی جارہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کچھ ایشوز ہیں جو ہر جگہ ہوتے ہیں لیکن ہم ان کو سا لوں کی بجائے مہینوں میں حل کرنے کیلئے اقدامات اور تمام مسائل کی لمحہ بہ لمحہ کو مانیٹرنگ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ سرکاری کمیٹی نہیں بلکہ یہ پارلیمانی کمیٹی ہے جس میں حکومت سمیت دوسری جماعتوں کے ارکان پارلیمان بھی شامل ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد ملک و قوم کے بہترین مفاد میں معاشی و اقتصادی استحکام کیلئے چیزوں کو بہتر ی کی طرف لاناہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی ارکان ہوں یا دیگر جماعتوں کے ارکان پارلیمنٹ تمام اس نقطے پر متفق ہیں کہ فیڈمک اورسی پیک کے پراجیکٹس کو برق رفتاری سے آگے بڑھنا اور تمام درپیش مسائل کو جلد سے جلد حل ہونا چاہیے۔

اس موقع پرضیا علمدار نے کہا کہ ہمارے پاس 16 بلین موجود ہیں اور ہم امید کرتے ہیں کہ سی پیکپرائرٹی اکنامک زون میں تیزی سے صنعتیں لگیں گی اور اس کام میں پارلیمانی کمیٹی بھی بہت ایکٹو ہے جس پر ہم ان کے مشکو ر ہیں۔