ہمارے مسائل کا بہترین حل جمہوری نظام میں مضمر ہے،جمہوریت کے استحکام کیلئے اجتماعی عالمی کوششوں کی ضرورت ہے، اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر

اسلام آباد۔28نومبر (اے پی پی):اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے جمہوریت کو درپیش چیلنجز سے نمٹنے کیلئے اجتماعی عالمی کوششوں کی ضرورت پر زور دیتے ہوئےکہا ہےکہ جمہوری اقدار کے فروغ اور جمہوریت کے استحکام کیلئے اجتماعی عالمی کوششوں کی ضرورت ہے؛ مظلوم کشمیری عوام پر بھارت کی جانب سے ڈھائے جانے والے مظالم پر عالمی برادری کی خاموشی ناقابل فہم ہے۔سپین سے موصول ہونے والی پریس ریلیز کے مطابق انہوں نے کہا کہ پاپولزم میں عالمی اضافے سے جمہوریت کے بنیادی اصولوں کو نقصان پہنچانے کا خطرہ ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے آئی پی یو کی 143ویں کانفرنس کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے کیا جو سپین کے شہر میڈرڈ میں جاری ہے۔ اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے سپیکر نے کہا کہ یہ کانفرنس ہمارے لیے بہت اہم ہے کیونکہ اس کانفرنس میں عصر حاضر کے چیلنجوں کو زیر بحث لایا گیا ہے جن میں کووڈ وبائی امراض کی وجہ عالمی معیشتوں پر پڑنے والے اثرات سمیت دیگر مسائل کو زیر غور لایا گیا ہے۔

سپیکر اسد قیصر نے کہا کہ عالمی منظرنامے کے مطابق جمہوری ترقی کے تین واضح نشانات سامنے آتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج کی گلوبلائزڈ دنیا نے تیزی سے جمہوری اقدار اور اصولوں کو اپنایا ہے اور تمام ریاستیں ان کے حجم اور طاقت سے قطع نظر، عالمی حکمرانی کے نظام میں خودمختار مساوات کے حق سے فائدہ اٹھاتی ہیں۔ بات چیت اتفاق رائے اور تعاون ہمارے کثیر الجہتی کام اور عالمی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے ضروری ہیں۔

انہوں نے کہا کہ فلاح و بہبود کو فروغ دینا اور انسانی حقوق کا تحفظ سیاسی نظام کی بنیاد ہے۔ آج عوامی حکومتیں عوام کے لیے اور عوام کے ذریعے موجود ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج کے جدید دور میں شہری بے حد بااختیار ہو چکے ہیں، نئی اور ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز نے معلومات کے خزانے تک رسائی کو کھول دیا ہے، شفافیت کو فروغ دیا ہے، اور شہری شراکت داری کی نئی راہیں کھول دی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ان حوصلہ افزا رجحانات نے نئے چیلنجز کو اجاگر کیا ہے۔ تین مخصوص چیلنجوں پر روشنی ڈالتے ہوئے سپیکر نے کہا کہ پاپولزم میں عالمی اضافے سے جمہوریت کے بنیادی اصولوں کو نقصان پہنچانے کا خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ نفرت پر مبنی نظریات نے معاشروں کو نقصان پہنچایا ہے جس کی وجہ سے معاشرے میں عدم برداشت بڑھتا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پریشان کن بات یہ ہے کہ پاپولسٹ لیڈر غلط غلط معلومات پھیلا کر ووٹوں کو بڑھانے کے لیے لوگوں کو تقسیم کر رہے ہیں۔

انتخابی عمل کا یہ غلط استعمال اور انسانی وقار پر حملہ جمہوریت کے تصورات کے لیے بہت بڑا نقصان ہے۔ انہوں نے کہا کہ طاقتور ریاستیں عالمی احتساب سے محفوظ رہیں۔تیسرے چیلنج کا تذکرہ کرتے ہوئے اسپیکر نے نے کہا کہ اصولوں اور عمل کے درمیان یہ بڑھتی ہوئی خلیج بہادر کشمیری عوام کی حالت زار سے گونجتی ہے۔ 05 اگست 2019 سے قابض فاشسٹ بھارت نے وحشیانہ طاقت کے استعمال کے ذریعے کشمیریوں پر غیر قانونی اور یکطرفہ اقدامات کا سلسلہ مسلط کر رکھا ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارت نے یہ اقدامات اقوام متحدہ کے تسلیم شدہ متنازعہ علاقے کی جغرافیائی حیثیت کو تبدیل کرنے کے لیے کیے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایسے اقدامات جمہوریت، قانون کی حکمرانی اور انسانی حقوق کے بنیادی اصولوں کی صریح خلاف ورزی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ بھارت کی جانب سے یہ سب کچھ کئے جانے کے باوجود اپنے سیاسی اور معاشی مفادات کے پیش نظر جمہوریت اور انسانی حقوق کے بہت سے عالمی چیمپئن خاموشں تماشائی بنے بیٹھے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری عوام کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق اپنے مستقبل کا تعین کرنے اور اپنے جمہوری حق کے استعمال کے لیے عالمی برادری کو کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ دن دور نہیں جب کشمیری عوام اپنے بنیادی حق کو حاصل کرنے میں کامیاب ہونگے۔اسپیکر نے کہا کہ عالمی برادری غیر منصفانہ عالمی معاشی نظام کی وجہ سے بے اطمینانی کے دور سے گزر رہی ہے۔ امیر امیر تر اور غریب غریب تر ہوتا جا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ کووڈ کی وبا نے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر ریاستوں کے درمیان بڑھتی ہوئی ساخت سے عدم مساوات کو مزید سامنے لایا ہے۔افسوس کے ساتھ، مشرق وسطی نے خود غرضی کے نقطہ نظر کا انتخاب کیا ہے جس کی ایک مثال جنوبی افریقہ میں کووڈ کی ایک نئی قسم کے پھیلاؤ میں دیکھی جا سکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک سیاسی کارکن کی حیثیت سے وہ اس بات پر پختہ یقین رکھتے ہیں کہ ہمارے مسائل کا بہترین حل جمہوری نظام میں مضمر ہے۔انہوں نے کہا کہ عصر حاضر کے چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے تین سطحوں پر عمل کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ جمہوریت اتنی ہی مضبوط ہوتی ہے جتنے اس کے شہری ہوتے ہیں، اس لیے ہمیں اپنے لوگوں کو تعلیم یافتہ اور بااختیار بنانے میں مزید سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملکی سطح پر قانونی، انتظامی اور پالیسی اصلاحات پر کام جاری رکھا جانا چاہیے تاکہ ہمارے سیاسی نظام کو مضبوط کیا جا سکے۔انہوں نے کہا کہ بدعنوانی کا مقابلہ کرنے کے لیے خود احتسابی کے عمل کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔ اسپیکر نےبین الاقوامی سطح پر عالمی گورننس کے نظام میں اصلاحات کی فوری ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ جیسا کہ کوویڈ 19وبائی مرض کم ہوا ہے کاروباری نظام زندگی دوبارہ معمول پر آ رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان جمہوری اقدار اور قواعد پر مبنی بین الاقوامی نظم کو فروغ دینے میں اقوام متحدہ کے مرکزی کردار کو مکمل طور پر تسلیم کرتا ہے

اور عالمی مسائل پر بات چیت اور ان کے حل کے لیے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی ‘ورلڈز پارلیمنٹ’ کو مرکزی فورم کے طور پر بحال کرنے کا مطالبہ کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان یہ بھی مانتا ہے کہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے اصولوں کا احترام اور پاسداری جیسے ریاستوں کی خود مختار مساوات، تنازعات کا حل، دھمکی یا طاقت کے استعمال سے گریز، ملکی معاملات میں عدم مداخلت اور عوام کے حقوق کا احترام حق خود ارادیت کے لیے بین الاقوامی سطح پر جمہوری اقدار اور اصولوں کو مضبوط بنانے کے لیے اہم ہیں۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ اس اسمبلی میں ہونے والی بات چیت سے عمل پر مبنی نتائج حاصل ہوں گے جو ہمارے عوام کی جمہوری امنگوں پر پورا اتریں گے اور قومی اور بین الاقوامی سطح پر جمہوریت کے اصولوں کو مضبوط کرنے میں معاون ثابت ہونگے۔ انہوں نے اس اجلاس کی میزبانی کرنے پر سپین کی پارلیمنٹ کا شکریہ ادا کیا۔انہوں نے کووڈ-19 سے وابستہ رکاوٹوں کے باوجود بہترین انتظامات پر آئی پی یو سیکرٹریٹ کی بھی تعریف کی۔