جاپان میں پاکستانی سفیر کو جاپانی شاعر موراساکی شیکیبو کی کتاب ’’گینجی مونوگاتاری ‘‘ کا اردو ترجمہ پیش

Pakistani Ambassador
Pakistani Ambassador

ٹوکیو۔31جنوری (اے پی پی):پاکستان جاپان لٹریچر فورم کے بانی خرم سہیل نے جاپان میں پاکستانی سفیر رضا بشیر تارڑ کو جاپانی شاعر موراساکی شیکیبو کی کتاب ’’گینجی مونوگاتاری ‘‘ کا اردو ترجمہ پیش کیا۔ گینجی کی کہانی، جسے گینجی مونوگاتاری کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، گیارہویں صدی کے اوائل کے جاپانی ادب کا ایک کلاسک کام ہے جسے جاپانی شاعر موراساکی شیکیبو نے لکھا ہے ،قدیم زبان اور شاعرانہ پیچیدہ انداز میں لکھی گئی کتاب میں ہیان دور میں اعلیٰ درباریوں کے طرز زندگی کو ظاہرکیا گیا ہے۔

یہ اردو ترجمہ پراجیکٹ ثقافتی تعاون میں ایک اہم سنگ میل کی نشاندہی کرتا ہے۔ اصل مترجم باقر نقوی کے انتقال سمیت دیگر چیلنجزکے باوجود پاکستان جاپان لٹریچر فورم کے بانی خرم سہیل نے غیر متزلزل عزم کے ساتھ اس کام کا بیڑا اٹھایا، اس غیر معمولی ترجمے کی تکمیل کو یقینی بنانے کے لیے 5 سال تک کام کیا۔ مترجمین نے متن کو 800 سے زیادہ فٹ نوٹس کے ساتھ نکھار دیا ہے جو گینجی مونوگاتاری کی پیچیدگیوں کے بارے میں گہری بصیرت فراہم کرتے ہیں۔

گینجی مونوگاتاری کااردو ترجمہ پہلا غیر ملکی زبان کا ترجمہ ہے جس میں اصل نثر اور شاعری کے امتیازات کو برقرار رکھا گیا ہے ۔پاکستانی سفیر رضا بشیر تارڑ نے اپنے ریمارکس میں جاپان اور پاکستان کے درمیان اس ترجمے سے قائم ہونے والے ثقافتی پل کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ یہ پیشکش ہماری دونوں قوموں کے درمیان تعاون اور افہام و تفہیم کے پائیدار جذبے کی مثال ہے۔ یہ ہمارے بھرپور ثقافتی تبادلے کا ثبوت ہے ۔ یہ جاپان اور پاکستان کے درمیان دیرینہ دوستی کا ایک ثقافتی سنگ میل ہے۔