شرح سود میں نمایاں کمی کی جانی چاہیے تا کہ نجی شعبے کو سستے قرضے فراہم ہوں ،اس سے کاروباری سرگرمیوں میں تیزی آئے گی ، صدر آئی سی سی آئی احسن ظفر بختاوری

Ahsan Zafar Bakhtavari
Ahsan Zafar Bakhtavari

اسلام آباد۔27دسمبر (اے پی پی):اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز کے صدر احسن ظفر بختاوری نےکہاہے کہ شرح سود میں نمایاں کمی کی جانی چاہیے تا کہ نجی شعبے کو سستے قرضے فراہم ہوں ،اس سے کاروباری سرگرمیوں میں تیزی اور معیشت جلد بحال ہو گی۔ بدھ کو ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ2023میں نجی شعبے کو بینکوں نے صرف 208 ارب روپے کے قرضے جاری کئے جس کی وجہ سے ملک کی مجموعی قومی پیداوار میں بھی کمی واقع ہوئی ۔

ایف پی سی سی آئی اور آئی سی سی آئی کے سابق صدر زبیر احمد ملک نے اپنے خطاب میں کہا کہ حکومت نے اس سال اقتصادی ترقی کا ہدف 2 سے 3 فیصد رکھا ہے جس کا حصول نجی شعبے کو آسان قرضے فراہم کر کے ہی ممکن بنایا جا سکتا ہے۔ چیمبر کے سابق صدراور یو بی جی پاکستان کے سیکرٹری جنرل ظفر بختاوری نے کہا کہ آنے والی حکومت پالیسیوں کے تسلسل کو یقینی بنائے تا کہ نجی شعبہ اعتماد کے ساتھ پاکستان میں کاروبار اور سرمایہ کاری کےلئے طویل المدتی منصوبے بنا سکے۔

چیمبر کے سابق صدر محمد اعجاز عباسی، فیڈریشن آف ریئلٹرز پاکستان کے صدر سردار طاہر محمود، آئی سی سی آئی کے سابق سینئر نائب صدر محمد نوید ملک اور دیگر نے بھی اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔