میانمار میں کورونا وائرس کی عالمی وباء اور فوجی بغاوت کے باعث غربت بڑھ سکتی ہے،اقوام متحدہ

اقوام متحدہ ۔3مئی (اے پی پی):اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام یو این ڈی پی نے خبردار کیا ہے کہ کورونا وائرس کی عالمی وبا اور فروری کی فوجی بغاوت کے سماجی و اقتصادی اثرات کے باعث آئندہ سال کے اوائل تک میانمار کی تقریباً نصف آبادی غربت کا شکار ہو سکتی ہے۔

اقوام متحدہ کی جاری کردہ رپورٹ میں کہا کہ عالمی وبا کے پھیلاؤ کی وجہ سے زراعت اور ماہی گیری سمیت کئی صنعتی شعبوںمیں آمدنی کم ہو رہی ہے جبکہ فوجی بغاوت کے بعد حکومتی اعانت ناکافی ہونے کی وجہ سے اقتصادی بدحالی میں تیزی آئی ہے۔اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام کا کہنا ہے کہ تقریباً ایک کروڑ 20 لاکھ افراد غربت کا شکار ہو سکتے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس کے نتیجے میں امکان ہے کہ 2022 کے اوائل تک 2 کروڑ 50 لاکھ افراد یعنی میانمار کی تقریبا نصف آبادی قومی غربت کی حد سے نیچے زندگی گزار رہی ہو۔ 2017 میں ملک میں غربت کی شرح کم ہو کر 28.4 فیصد ہو گئی تھی۔