وفاقی وزیرڈاکٹر فہمیدہ مرزا کی زیرصدارت ویٹرنری تعلیم سے متعلق امور پر سرکاری و نجی شعبہ کی یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کااجلاس

وفاقی وزیرڈاکٹر فہمیدہ مرزا کی زیرصدارت ویٹرنری تعلیم سے متعلق امور پر سرکاری و نجی شعبہ کی یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کااجلاس
وفاقی وزیرڈاکٹر فہمیدہ مرزا کی زیرصدارت ویٹرنری تعلیم سے متعلق امور پر سرکاری و نجی شعبہ کی یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کااجلاس

اسلام آباد۔8اپریل (اے پی پی):وفاقی وزیر برائے بین الصوبائی رابطہ (آئی پی سی) ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے پاکستان کے تمام صوبوں کی نمائندگی کرنے والی سرکاری و نجی شعبہ کی یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کے ساتھ ویٹرنری تعلیم سے متعلق امور پراجلاس کی صدارت کی۔ اجلاس میں وفاقی سیکرٹری آئی پی سی اور وزارت کے اعلیٰ افسران نے بھی شرکت کی۔

اجلاس میں ویٹرنری تعلیمی اداروں کی منظوری،رجسٹریشن اور طلباء کے دیگر امور ،نصاب ، سینئر فیکلٹی کی دستیابی ، ڈاکٹروں کی تربیت اور مویشیوں سے متعلق امراض پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ویٹرنری بیماریوں کے لئے ویکسین تیار کرنے کی صلاحیت پر خصوصی غور کیا گیا، خاص طور پر ملک میں سب سے عام پاؤں اور منہ کی بیماری ہے۔

وزیر نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پی ای سی) کی چھتری میں منہ کھر کی بیماری کے اس مسئلے کو حل کرنے کے لئے چین سے تعاون اور تکنیکی مہارت حاصل کی جاسکتی ہے۔ڈاکٹر فہمیدہ نے وزیر اعظم شکایتی پورٹل پر طلباء کی طرف سے کی جانے والی شکایات اور بین الاقوامی معیار کے مطابق ویٹرنری میڈیسن کے نصاب کو اپ گریڈ کرکے ویٹرنری تعلیم میں بہتری لانے کے حکومتی عزم سے متعلق امور پر بھی روشنی ڈالی کیونکہ ویٹرنری اور لائیو اسٹاک سیکٹر میں جدید ترین تکنیکی ترقی میں پاکستان بہت پیچھے ہے۔

وزیر موصوف نے بتایا کہ حکومت ویٹرنری تعلیم کے فروغ میں معاون ہے اور ملک بھر میں ویٹرنری طلبہ کے لئے ہائوس جاب متعارف کروانے پر سنجیدہ ہے جیسا کہ باقاعدہ میڈیکل کالجوں میں ہوتا ہے۔وزارت اس ضمن میں تمام صوبوں کے ساتھ معاملہ لے گی۔ پیشہ ور افراد اور طلباء کے کیریئر کی ترقی کے لئے پی ایچ ڈی پروگراموں ، غیر ملکی وظائف اور بین الاقوامی تربیتوں میں ویٹرنری تعلیم کو زیادہ ترجیح دینے کی ضرورت ایک اہم مرکز ہے جس کے لئے ہائر ایجوکیشن کمیشن سے رجوع کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں جاری سوالات کے سنگین مسئلے کو ، جلد ہی اس لعنت کے خاتمے کی اہمیت کو ترجیحی بنیادوں پر ہونا چاہئے۔ان طلبا کو مرکزی دھارے میں لانے کے معاملات پر جو ان اداروں سے تعلق رکھتے ہیں جنہیں تسلیم نہیں کیا گیا تھا ، وزیر نے ایسے طلبا کو بروقت ریلیف کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔

اجلاس کے شرکاء نے ویٹرنری یونیورسٹیوں اور اداروں کی بنیادی ڈھانچے کی ترقی اور ادارہ جاتی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے فنڈ اور گرانٹ کی ضرورت پر بھی تبادلہ خیال کیا۔ وزیر نے وائس چانسلر سے اپنی ضروریات ، خدشات اور تجاویز کو بات چیت کرنے کو بھی کہا ، تاکہ ان کی جانچ کی جاسکے اور بین الصوبائی رابطہ کمیٹی (آئی پی سی سی) کے اجلاس کے ایجنڈے میں گفتگو اور آگے بڑھنے کے لئے شامل کیا جاسکے۔